شعر و شاعری

یہ عجب ساعت رخصت ہے کہ ڈر لگتا ہے

یہ عجب ساعت رخصت ہے کہ ڈر لگتا ہے

شہر کا شہر مجھے رخت سفر لگتا ہے

رات کو گھر سے نکلتے ہوئے ڈر لگتا ہے

چاند دیوار پے رکھا ہوا سر لگتا ہے

ہم کو دل نے نہیں حالات نے نزدیک کیا

دھوپ میں دور سے ہر شخص شجر لگتا ہے

جس پہ چلتے ہوئے سوچا تھا کہ لوٹ آؤں گا

اب وہ رستہ بھی مجھے شہر بدر لگتا ہے

مجھ سے تو دل بھی محبت میں نہیں خرچ ہوا

تم تو کہتے تھے کہ اس کام میں گھر لگتا ہے

وقت لفظوں سے بنائی ہوئی چادر جیسا

اوڑھ لیتا ہوں تو سب خواب ہنر لگتا ہے

اس زمانہ میں تو اتنا بھی غنیمت ہے میاں

کوئی باہر سے بھی درویش اگر لگتا ہے

اپنے شجرے کہ وہ تصدیق کرائے جا کر

جس کو زنجیر پہنتے ہوئے ڈر لگتا ہے

ایک مدت سے مری ماں نہیں سوئی تابشؔ

میں نے اک بار کہا تھا مجھے ڈر لگتا ہے

Show More

39 Comments

  1. Hey there I am so happy I found your web site,
    I really found you by mistake, while I was researching on Google for something else, Regardless I am here now and would just like to say thanks
    a lot for a marvelous post and a all round thrilling blog (I
    also love the theme/design), I don’t have time
    to read it all at the moment but I have bookmarked it and also added your RSS feeds, so when I have time I will be back to read
    more, Please do keep up the excellent job. https://hydroxychloroquinej.jueriy.com/

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔

Back to top button
Close
Close